وقار اور عزت کی زندگی

سردار  نثار علی  ھزارہ   پر  کویٹہ  شھر  کے  انتہایی  محفوظ  علاقے  میں  قاتلانہ  حملہ  ھوا  جسکے  نتیجے  میں  سردار  نثار  خود  شدید  زخمی  ھوگیے  اور  انکا  ڈراہیور شھادت پا گیا ، معاشرے  میں  بسنے  والے  اکثر  افراد  کو  اس  حادثے    اور  اسکے  پیچھے  دھشتگرد عناصر  کے  گھناونے  چہرے  نظر  آریے  تھے، لیکن   سردار  صاحب   نے  معاملے  کو  کاروباری  دشمنی کہہ  کر  ٹال دیا ، ایک  لمبے  وقفے  کے  بعد   پودگلی   کا   المناک  واقعہ  رونما  ھوا جس  میں   چند  قیمتی   جانیں  چلی  گیی، ابتدا  میں  اس   مسلے  کو  بھی  کچھ  اور  رنگ  دینے  کی  کوشش  کی  گیی  لیکن   چند  عرصے  بعد ھی  یہ  حقیقت   سب  پر  عیاں  ھوگیی  کہ  اس  واقعہ  کے  پیچھے  بھی   فرقہ  پرست  دھشتگردوں  کا ھی  ہاتھہ  ییں،  اور  پھر   امام بارگاہ  کلان  کے    خونی  جمعہ  کا  سانحہ  رونما  ھوا   جس  نے  پہلی   مرتبہ   سب  کو  ہلا  کر  رکھہ  دیا  کہ   فرقے  کے  نام  پر   وحشی جانوروں کا  ٹولہ  اس  شہر  میں  بھی  فعال  ھوگیا  ھے۔  کویٹہ   میں  رہنے  والے  سبھی  اقوام  کی  طرح  ھزارہ  اور  شیعہ  اقوام   میں  بھی  اس  مسلے  پر  کویی  دو  راے  نہیں  ییں  کہ    ایسے  عناصر  کا   تعلق  کسی  بھی  طرح  کویٹہ  میں   بسنے  والے مقامی  اقوام  سے  نہیں  ھوسکتا  ھے  جو  صدیوں   سے  شیر  و  شکر  اس  شہر  میں  اکٹھے  رہ  رہے ھے ، بلکہ  یہ  مخصوص  ایجنڈے  کی  تکمیل  کیلیے  سراسر  باہر  سے  درامد  شدہ  عناصر ییں جنکا  اس خطے  میں   تبدیلیاں  لانے  والے   اندرونی  و  بیرونی قوتوں  سے  گہرا  تعلق  ھے ، امامبارگاہ   کلان  کے  واقعے  کے  مجرموں  کی  گرفتاری  بھی  ھویی  جنکا  مستونگ   میں  عرصے  سے   فرقہ پرست  جہادی  مولویوں  اور  ایجنسیوں  کی  سرپرستی  میں     چلنے  والے  مدرسے   سے  تانے بانے   ملے   ،ان  گرفتاریوں  کا  بھی کویی  خاطر خواہ  نتیجہ  نہیں  نکل  سکا، پھر عشروں   سے  نکلنے   والے    عاشورہ  کے  جلوس  پر  وحشیانہ  حملہ  ھوا ، جس  میں  بڑوں   کے  ساتھہ ساتھہ  معصوم  بچوں  کی  بھی  ایک  بڑی  تعداد   خون  میں  نہلا  دی  گیی،   پھر  گذشتہ   دو  سال  سے   حکومتی  سرپرستی  اور  ایجنسیوں   کی   آشیرواد  سے  ٹارگٹ  کلنگ  کا    نہ   روکنے  والا   سلسلہ  چل  نکلا ،  شہر  میں   راہ  چلتے  مسافروں   سے   لیکر   دفتر    آنے   جانے  والے  لوگ   یا    محنت   مزدوری   کرنے   والے   پر امن  شہریوں   اور    بہت  سی  قابل  قدر  ھستیوں  کو  جن  کے  دل   ذات ،نسل  اور  فرقے  سے  بالاتر  ھوکر  انسانیت  کیلیے  دھڑکتے  تھے  ان  وحشیوں  کا   نشانہ  بنے  اور  ان   تمام   عزیزوں  کا   ھم  سے   بچھڑ  جانا   اس  بڑے   سناریو  کا  حصہ  تھا   کہ   اس   قوم  کو   خوف میں   مبتلا   کر کے   انکی   حوصلہ  شکنی   کی  جاے۔

اغیار  کا  تاریخی  طور  پر ھمیشہ  سے  مسلمانوں  کو  یہ  طعنہ  رہا  ھے  کہ  اسلام  بزور  شمشیر  پھیلایی  گیی  ھے    جبکہ   فرقے   کے  نام  پر  ان  وحشی  جانوروں  کی  وحشیانہ  کاروایوں   کے  بعد    ” شمشیر”   کا   لف‍ظ  بڑا  مہذب  سا   لگنے  لگا     ھے   شمشیر   کی   منطق   بولنے   والے   ھمیشہ   اس   غلط  فہمی  میں   مبتلا  رہ  چکے  ییں   کہ  دوسروں   کو  ” خوف ” میں  مبتلا  کرکے   اپنی   بات   منواسکتے  ییں  اور  اسی  خوف  اور  وحشت  کی  فضا   کو  پھیلانے   کیلیے   کچھ  سالوں  سے   ایجنسیوں  کے  سایے  تلے  ریال  دینے  والے آقاووں  کی  خوشنودی   کیلیے  منظم  طور  پر  پانچ  سو    سے   زاید  بے  گناہ  اور  نہتے  افراد   کو  نشانہ  بناکر   قتل  کر چکے  ییں
عزیزان  گرامی ,ھمارے   مدمقابل   وحشی   جانوروں  کا   ایسا   ٹولہ  لا  کھڑا  کیا  گیا   ھے  جو   ھم   سے   دھشت   اور  زبردستی   کی   زبان   میں  مخاطب  ییں ،  وہ  سرے   سے  ھمارے   وجود   کو   تسلیم   کرنے  کیلیے   تیار  ھی  نہیں  ییں ،  وہ   نابودی   کی   منطق   بول   رہے   ییں ،  اور  ھمارے   وجود   کے  مخالف  ییں ،  ھماری   قوم   سے  متعلق   ذرا  انکے  عزایم   اور   انکے   حقارت  امیز  لب  ولہجے   کو   مدنظر  رکھے  اور  پھر   اسکے  مقابل   اختیار    کیے  جانے  والی   سیاست  اور   اسٹراٹیجی    پر  غور   کیجیے،  کیا   ایسے  عزایم   رکھنے  والوں  کے   آگے  گھٹنے  ٹیکنا   اور   انکے    پھیلایے  ھوے  خوف    میں  مبتلا  ھوکر   زندگی  گذارنا  درست   سیاست   اور  اسٹرٹیجی   ھوگی  ؟  یا  اسکے  برعکس  اب  تک   کی  طرح  انکی   انکھوں   میں   انکھیں   ڈال   کر   سربلند،  ‍باعزت  اور  وقار  کیساتھ   اس   شہر   میں    زندگی   گذارنا   ھی  درست  سیاست   اور ھم    سب   کی   ترجیج    ھونی   چاھیے   ؟

سوال  یہ  ھے  کہ  کیا   کویی   قوم   اپنی    تاریخ ، عزت ، وقار ، آبرو   اور   ناموس   کا   دفاع     پسپایی    اور   ذلت  آمیز   سیاست   اختیار  کرکے   کرسکتے  ییں   جسکی   سب  سے  بڑی  مثال    سرحد   پار   اپنوں   کو  دیکھیے ،  ڈر   اور   خوف  اور   مصلحت  کی     منطق   نے   انھیں   کتنا  ڈر پوک  اور  کوکھلا ، جبکہ   دشمن   کو   کتنا   جری   اور  گستاخ   بنا  دیا   ھے  کہ   انکے  گھروں  میں   گھس   کر   انھیں   مار  کر  چلے  جاتے  ییں   اور  اتنی   تعداد  میں   ھونے  کے  باوجود  اپنا   دفاع  بھی  نہیں   کرسکتے   کیونکہ  اکثریت  نے  خوفزدہ  ھوکر  اپنے  آپ   کو  نفسیاتی  طور  پر  شکست  خوردہ  اور    کمزور   قوم   قبول  کرچکے   ییں ، دس  سال   سے   امریکہ ،  ناٹو  اور  سعودی  خبیث  بادشاہ    کے  در  پر  سجدے   بھی  انکے   کسی   کام  نہ   آسکے ،  لیکن   اسکے  برعکس  اتنے  عرصے  قتل  و  غارتگری  کے  سایے  تلے   اور  اقلیت  میں  ھونے  کے  باوجود   نفسیاتی طور  پر   مضبوط  اور  محکم  رہ  جانے  والی  پاکستان  میں  ھماری  قوم    اپنا   دفاع   نہایت  شجاعت   اور  جوان مردی   سے   کررھی   ھے کیونکہ   انہوں  نے   تاریخ   سے   سبق   لیتے  ھوے   اپنے   اسلاف   کیطرح   مشکل  حالات  میں   بھی  عزت  اور  وقار  کیساتھ   زندگی   گذارنے   کو  ترجیح  دی   ھے  اور   باوجود  سخت  حالات  کے   اپنی  روزمرہ  کی  عادی  زندگی  گزار  رھے   ییں۔

اتنے    قتل  و   غارت  گری  اور  وحشی  پنے  کے  بعد ،  ان  خبیثوں  کو   شدت  سے  اس  بات  کی  توقع   تھی   کہ   یہ   لوگ    خوف میں   مبتلا   ھوجاینگے، ڈر  جاینگے ،سہمے  ھونگے ،لیکن   امبارگاہ  کلان   کے  واقعہ  سے  لیکر   عاشورہ   کے  جلوس   تک   خود  انکے  حملہ آوروں   کا   ڈر  کر  خودکشی  کرنا  اور  ھمارے   جوانوں  کی   شجاعت   اور  غیرت  کے   سامنے   ڈھیر  ھوجانا  انکی  ذلت  کی  نمایش  ھے، خدا  پر  یقین   رکھنے والے   کبھی  چھپ  کر  وار   نہیں  کرتے،  اور  سامنے   آنے  کا  حوصلہ   شاید   قیامت   تک  اس   قوم  کے   مقابل   پیدا  نہ   ھوسکے،یہ   قوم   خوف  جیسی  حقیر  چیز   سے  ناآشنا   ھے ، موت  پر  لپک   جانا  انکی   ماووں   نے  انکو   دودھ   میں  پلایا  ھے ، غیرت  اور  شجاعت   انکی   رگوں   میں   پھیلا  ھوا   ھے،  اس   خصوصیات   کے  ساتھ   اس  قوم   کو   خوف  میں  مبتلا  کرنے   کا   خیال  دشمن   اپنے  ساتھ  جہنم  تو   لے  جاسکتا  ھے   لیکن   جیتے  جی   ایسا   عملآ   ممکن   نہیں

گذشتہ  جمعے  کے    یوم القدس  کا  جلوس   خوف   کی  منطق  شکنی   کا  نام   ھے ، اس   دن   کے  شھیدوں  نے اپنے لہو   کی  سرخی   سے  دشمن   کی  منطق   کو    نہایت  حقارت سے     مسترد   کردیا     اور  زندہ   رہنے   والوں   کو   یہ  واضح   پیغام   دے  دیا    کہ   آگر    اس   صوبے  اور  شہر   میں   دوسری   اقوام   کے   درمیان    اپنی   تاریخی   عزت   اور   وقار  کو  محفوظ   بناتے  ھوے  عزت   اور  وقار  کی   زندگی    گذارنے  کی   روایت   برقرار   رکھنا   پڑے  تو   سر  اٹھا   کر  جیو   اور  اپنے  کسی  بھی   حق  سے  پسپایی  اختیار  نہ  کرو،   یاد   رکھو     اس  بات  کی  ھرگز   اجازت  نہیں  دینا  کہ    خوف   کی   منطق    کو  دشمن   اپنے   عمل   سے   اور    ایجنسیوں   کے   پروردہ   چند  نادان   مصلحت پسند    سیاست    کے  نام  پر   تم  لوگوں  پر   مسلط   کرسکے ،   اس  بات  سے  ھرگز  غافل  نہیں  ھونا   ،  کہ   اس   شہر   میں  ھم  نے   عزت  اور  وقار  کے  ساتھ   زندگی   گذارنا  ھیں ، میرے  باشعور عزیزوں  یہ   بڑی   سیاسی  اور  اسٹرٹیجک  عبرت  کا  مقام  ییں ،  جسے  ھمارا  اجتماعی  تجربہ  بھی   ثابت   کرچکا  ھے  کہ  ابتک   کی   باعزت  زندگی   ذلت   کی  ہزار  سالہ  زندگی   سے  بہتر   ھے، اور  اسی   تجربے  کی  روشنی  میں   ھمیں   اس  بچگانہ   منطق    کا    ھرگز  شکار  نہیں  ھونا  ھے  کہ  ” چرا  جلوس  بور  کدن ؟   ایسے  استدلال  کرنے  والوں  سے  پوچھنا  چاییے  کہ  جو  دوکان  میں  کام  کرتے  یا  دفتر  جاتے  یا  پھر  یوسفی  شھید !  کیا  سارے  جلوس  میں  مارے  گیے  تھے ؟   دشمن  کو  بالادست  کرنے  والے   استدلال   چاھے  کسی  بھی  زبان   سے  ادا  ھو  انکے  بہکاوے  میں   نہیں  آنا   چاھیے۔

آخر   میں   اس  بات   کی   طرف   اشارہ   ضروری  سمجھتا   ھوں   کہ   گذشتہ   کی   طرح  اب  بھی   ھمیں   اس  صوبے   اور  شہر   اور  یہاں  پر   بسنے  والی   ساری   اقوام  سے  محبت  اور  انکے   دکھ  درد   میں   شریک  رہتے   ھوے  ان   سے  باھمی   اخوت   اور   برادری    کے   رشتوں  کو   برقرار   رکھنا   ھوگا   اور  اقوام  و  مذاییب  کو   آپس   میں   دست  وگریبان   کرنے  کی   دشمن   کی   چالوں   کو    ھم    سب   نے   مشترکہ   طور  پر   گذشتہ    کی   طرح     ناکام    بنانا   ھوگا ،  اختتام   عزت  اور    سر بلندی    سے   جینے    کا    راستہ    بتانے    والے   امام   کے    قول    سے   کرونگا   ” کہ ذلت   کی   زندگی   سے  عزت   کی   موت  بدرجہ    بہتر   ھے”

8 responses to this post.

  1. they were going to mizan chock, not to syrab road or any other sensitive area. Mizan chok is almost the end of Alamdar road, and we see number of organizations hold their rally at that place. Do you thinks is it so big crime to forget the negligence of govt , to insult the blood of those innocent victims by pointing finger to the organizer and participants of this rally.

    جواب دیں

  2. tamamie kasa ki he sheeda ra aur kanwade sheeda ra mishnasa da yag gab kad azma mutafiq bashad ke tamamee sheeda az nihayet nek aur shrief famliya bodan, baqat bougi khouda kadshi har dafa sheeda ra intakab mona aur betrin ha ra mubra, shomo ra ba khoda har har kas ra kie mishnaseen sel kanin ki hami tar ni asta.

    جواب دیں

  3. خوفزدہ گی ، پسپایی ، خانہ نشینی، تا بہ کیی ؟ بالاآخر چند وقت بعد دہ سر دوکانھا اور خانہ ھای شمو اور شاید دہ سر ناموس شمو پیش شونہ، اینی برنامہ اور پلان دشمن استہ، او قوم بیدار شونین، امروز دہ سر جلوس صج سر جایی کار شمو دیگہ صبح سر جلوس جنازہ شمو حملہ مونن ، چیکار مونین بس او وقت جنازے خورا ھم دفن کدو بند مونیین، سادگی نکین دشمن وجود شمو را از ای شہر میخاید پاک کنہ، مطابق خواست دشمن حرکت نکنین ، کد جلوس یا کد دوکاندار یا کد ایگو حرکت شمو مخالفت فقط بہانہ استہ ۔ دشمن وجود شمو را میخواید ختم کنہ ، ھوشیار باشید ھوشیار

    جواب دیں

  4. waqti ki mo femliy hai sheedha ra gabai shi gosh moni kie unha chiqadar husileshi aur fikar shi biland asta , moham azuna husila migree aur dill mo kata moshna ki ejj gab niya kam az kam mo da he city sar kho bal gireefta zandagee metani , sar miedee lekin jokau namoni , mo da rahi koda jan dade, inshalla hee kuhoon ha rang maira l bas diga taraf tanqid wala ra sel monim ki az tarss aur jan dosti chee namna zuban istemal monan , az sharam sar mo tah mora

    جواب دیں

  5. Posted by Shoukat Ali on ستمبر 8, 2010 at 8:24 شام

    We know that we are brave but I would appreciate if you focus and write about how we need to be wise like other nations of the world. So that history does not repeat itself for us again. Therefore, those who were responsible for this tragic event in our society should be punished for the their act.

    جواب دیں

  6. death to communism and death to anti mazhab elements.
    khob site aste. admin azi site ra mo bayed ki bar poor mali tawoon kani

    جواب دیں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: