ھمارے عمل اور آشکارہ تضاد

               خروٹ  آباد  سے  ملحقہ   مشرقی  بایی  پاس  پر   چیچنیا   سے  تعلق  رکھنے  والے  ایک  ھی  خاندان  کے   پانچ   افراد   جوکہ   اخباری  ذرایع    کے   مطابق   غیر  قانونی   طریقے  سے  پاکستان   میں    داخل   ھوے  تھے     پولیس  کی   درندگی  اور   بربریت   کا  شکار  ھوکر  نہایت  بے رحمانہ   طور   پر   بیدردی   سے   قتل  کیے  گیے   ، اس   انسانیت   سوز   واقعے   کی    جتنی  بھی  مذمت  کی  جاے  کم  ھے ۔  علاقے   میں  آباد  لوگوں  نے  اپنے  ضمیر  کی   آواز  پر   پولیس  کی   بربریت  اور   ظلم   کیخلاف  احتجاج   بھی  کیا  جوکہ  ایک   شایستہ   اور  انسانی  عمل   ھے ۔  قومی  ذرایع  ابلاغ   نے    اپنے   فرایض   منصبی   کو  نبھاتے  ھوے  اس  واقعہ   کو   بے  پناہ   کوریج   بھی   دی  جو   اب   بھی  جاری  ھے  ،  جسکی  بدولت    اس   واقعہ  کے   بہت   سے   پوشیدہ  پہلو  بھی  بے نقاب  ھوگیے   ،   وفاقی  اور  صوبایی  حکومتوں  کے  نوٹس   لینے  پر   تحقیقاتی  ٹریبونل   کا   قیام   بھی  عمل   میں   لایا  گیا    جوکہ   چند  ہفتوں    میں  حقایق   جان  کر  حکومت  کو   رپورٹ   کرے  گی ۔  انسانی  حقوق   کے   تقریبآ   سارے    علمبردار  ادراے   اس   واقعہ   پر  حرکت  میں   آگیے ،  مختلف   چینلوں  پر  اس   واقعے   کے  حوالے  سے  ٹاک  شوز  کا   اہتمام   بھی  کیا   گیا  جو  اب  تک   جاری   ھے  مذھبی  سماجی  اور  سیاسی  تنظیموں   نے   بھی    اس     واقعے  پر   اپنے  غم   و  غصے   کا   اظہار  کیا   جوکہ  بجا  طور  پر   انسانی   اقدار   اور ھمدردی   کا   منہ  بولتا  ثبوت   ھے ،    لیکن   جہاں  اس  ناخوشگوار  واقعہ    کے   ردعمل   میں   پیش  آنے   والے   مذمتی  بیانات  ،  ٹاک  شوز ، میڈیا  کوریج اور   حکومتی   احکامات   کا    تذکرہ   آتا  ھے    وھی   اس   واقعہ   سے   متعلق   بہت   سے   مبہم   اور  لاجواب   سوالات      عوام   کے   ذہنوں   میں   گردش  کررھی   ھے   جنکے     تسلی   بخش   جوابات    بھی   ڈھونڈنے    ھونگے  ، میڈیا    رپورٹ    کے  مطابق    یہ   خاندان    ایسے   حالات    میں    جبکہ    ایبٹ  آباد   کا    واقعہ   چند   دن    پہلے    رونما   ھوا    تھا     افغانستان   کے   بدترین    جنگ  زدہ    علاقوں   سے   گذرتے   ھوے      چمن   کے   سرحدی  چیک پوسٹ    کو   بھی    بغیر   ویزے   کے   عبور    کرتا    ھوا    پاکستان   میں     داخل    ھوتا    ھے    جبکہ    پاکستان    میں    داخلی    سیکورٹی    اور    نام  نہاد    عالمی    دھشتگردی   کی   جنگ    کے   حوالے   سے    ان   ملکوں   سے    تعلق    رکھنے    والے    افراد    کے    بارے    میں     پہلے     سے   کافی     حساسیت    پایی    جاتی    ییں  ،  لیکن    پایی   جانے    والی   حساسیت   اور    حالات   کو    یکسر   نظر انداز    کرتے    ھوے    یہ     خاندان     پاکستان    میں   داخل    ھوکر   کویٹہ    تک     پہنچ     بھی    جاتا   ھے   جوکہ    سیدھے    سادے  عوام    کے    ذہنوں    میں   ان گنت     سوالات     جنم    لینے    کا    سبب    بنے   ھے    بہرحال    اس    سارے    حالات    اور    سوالات     کا    تذکرہ     کرکے    ھمارا     مقصد    ھرگز    یہ    نہیں    تھا     کہ    پہلے    سے    موجود   آپ    کے    معلومات     میں     اضافہ    کیا    جاے      بلکہ    اپنے     قاریین ،  ارباب   اقتدار ،  سیاسی    اور    سماجی     تنظیموں ،  انسانی  حقوق     کے    نام نہاد   علمبرداروں    اور    حقایق    کو  چھپانے    والی     ھماری  میڈیا     کی    توجہ   اس    جانب     مبذول     کروانا    تھا     کہ   اسی    بایی  پاس    اور    ملحقہ  علاقوں    میں   خروٹ  آباد    کے    واقعے    سے    چند    دن     پہلے   اور  بعد    میں    اس   سے    بھی    دلخراش    واقعات     میں    ھزارہ  قوم     کے  جوان ، بوڑھے ، خواتین   اور   حتی    بچوں    کو    مسلک    کی    بنیاد    پر    اسٹبلیشمنٹ     کے    پروردہ    دھشتگردوں   نے     خاک  و خون    میں    غلاتان     کرکے     جو    خون   کی   ھولی  کھیلی    تھی  ،  حکومت  وقت   ،  جرایم   پر   پردہ  ڈالنے   والی   میڈیا   اور   دوسرے  ادارے   سب  کـچھ   جان   کر  کیوں   انجان   بنے   رھتے    ییں    حکومتی  ادارے    آخر    کیوں    خروٹ  آباد     طرز     کا     عکس  العمل     اور   مستعدی     ان   واقعات    پر   بھی    نہیں   دیکھاتے ؟   کیوں   میڈیا    ان   واقعات    پر   اپنی    تمام    صحافتی   ذمہ  داریوں    کو    فراموش   کرتے   ھوے  خاموش   تماشایی  بنے    رہنے   کو   ترجیح  دیتے   ییں  ،کیوں   ھمارے   جسٹس   صاحبان   سوموٹو  نوٹس  لینا   بھول  جاتے  ییں  ؟  کیوں   کویی   ذمہ دار   یا    سی سی پی او   فارغ    نہیں   کیا   جاتا ؟   ۔  کیوں   وزیراعلی   عملی  اقدام  کے  بجاے  نمایشی   بیانات    پر  اکتفا  کرتے   ییں ؟ کیوں    وزیر  داخلہ   ان   سارے  واقعات  پر   اپنا   استعفا  پیش   نہیں  کرتے ؟  جن  علاقوں    میں     ایسے  انسانییت   سوز  واقعات   رونما  ھوتے   ییں   ان  علاقوں   کے   خوابیدہ  ضمیر عوام   ضمیر    کی  آواز  پر    سراپا  احتجاج    کیوں  نہیں  بنتے ؟  کیا    مظالیم    کے   شکار    عوام    ایسا   سمجنے  میں   حق  بجانب   نہیں   ھونگے   کہ   ارباب   اقتدار  اور  میڈیا   ان   جرایم   میں   برابر   کے   شریک   ییں ؟  آخر    ھم    اس   ناروا  سلوک   کا شکار  کیوں  ییں  ؟   اور  اپنی   فریاد    کس   در  پر   لے  جاے ؟   کیا   خروٹ  آباد   میں  مارے  جانے  والے  غیر  ملکیوں کا  خون   وطن  سے   بے پناہ  محبت  رکھنے  والے   ھمارے  شہدا   کے  خون   سے   زیادہ  رنگین   تھے  ؟  کیا   ان   مشکوک  غیر  ملکیوں   سے    ھم   اس   ملک  اور  صوبے  کے    وفادار    نہیں   ییں   ؟  کیا    کبھی    ان    غیر    ملکیوں    کیطرح    ھم     نے   اس   ملک   کے    خلاف    دھشتگردانہ   اور   تخریبی    کارواییاں  کی   ییں  ؟  اگر    ان   سارے    سوالات    کا   جواب     نفی    میں    ھے     تو    پھر    اخلاقیات   کا   تقاضا   اور    ھمارا    مطالبہ   ھے  کہ    ھمارے     بے حس    حکمران    اپنے     مکروہ    چہروں    سے      منافقانہ    نقاب    اتار   کر    عوام    کے    جذبات    سے     مزید    کھیلنا    بند    کردے  ،   کیونکہ    لوگوں    کے    صبر   کا   پیمانہ لبریز    ھونے    کو    ییں     اور   اس    شیطانی    بساط    کو     جتنا    جلد     ممکن    ھوسکے    لپیٹے    لیں    تاکہ    غریب    عوام       سکھ   کا   سانس   لے   سکے   ،    جرایم    پر   خاموش   رہنے    والے   شریک   جرم    چینلز    آزادی  صحافت   اور  حقایق   جاننے   والے    سچ   کی   تلاش    جیسے    اپنے    کوکھلے    نعروں    سے   عوام     کو    بےوقوف     بنانا    بند    کردے    ،  سکوت   اختیار    کیے    انسانی    حقوق    کی     نمایشی    تنظیمیں    ان    واقعات    پر    جہاں     گھاس    چرنے    جاتی    ییں    جاے     لیکن   عوام     کو   مزید    الو     نا بناے  ،  کب    تک     اپنے   جرایم    پر    پردہ  پوشی     میں    ایک    دوسرے    کی    مدد    کرتے    رھوگے  ،  کب    تک    جرم    کا    ہاتھ    کھلا    رکھو    گے
ارباب    اقتدار     اور     طاقت     کے     نشے     میں  بد مست     شیطانی    بساط     بچھانے     والے     تاریخ     کے      ان    اوراق     کو     ضرور     پڑھے     کہ     مظلوم     کی     آہ      قہر   خداوندی      بنکر    ٹوٹتی     ییں    اور   جرایم    پر    پردہ  پوش      میڈیا    یہ     بات     ذہن    نشین    کرلے    کہ     خون     ناحق     چھپنے     سے    نہیں   چھپتا     بلکہ     یہ    سر    چڑھ     کر    بولتا   ھے  ،  شہدا    کا    خون    ان    تمام     مظالم    کا   پردہ     چاک     کرکے     ظالموں    کے     بھیانک    چہروں    سے    نقاب     ضرور     اتارے    گی،    ھمیں   قدرت    کے      وعدہوں    پر     پورا   یقین     اور     اعتماد    ھے ۔   اختتام    اسٹبلیشمنٹ    کے     پروردہ   سرکاری   دھشتگرد     عناصر    کے    ہاتھوں     توغی   روڈ     کے     قاری  عبدالجلیل     کے     مارے    جانے      کی    بھرپور   مذمت     سے    کرینگے ،    اور   تاکید   کرتے   ییں    کہ     یہ    وھی    عناصر    ھے     جنکے    آستینوں     پر     ھمارے  شہدا     کے     خون    کے     چھینٹے     بھی      لگے     ییں     اب      وھی   عناصر      کویٹہ     کے      عوام     کو     مسلک     کی    بنیاد    پر     دست  و  گریبان    کرنے     کی    خواہش    میں     مبتلا     ھوکر     اس     قسم     کی    بزدلانہ    حرکتوں     پر    اتر    آہے     ییں    ۔  علاقے    کے    باشعور   عوام     ان    سازشوں     سے     مکمل    باخبر   ھے    اور   اس    قسم     کی     کسی    بچگانہ   کھیل    میں    پڑنے    والے    نہیں    ،  ایسی    تمام     سازشوں    کو    اپنے  شعور    کی    طاقت     سے     انشااللہ      ناکام     بنادینگے 

One response to this post.

  1. Posted by hazara the great on مئی 25, 2011 at 10:33 شام

    zabardast bro thank you so much dil ma taza shud az gapai shum himat amad manay ma KHUDA shomo ra hamasha sar buland bela Ameen

    جواب دیں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: