وہ جو تاریک راھوں میں مارے گیے

آج    بروری   میں     پیش   آنے   والا    واقعہ   نوعیت   کے   لحاظ    سے    نیا   نہیں   لیکن    ماھیت   کے   لحاظ   سے   شدید   ضرور   ھے ،   اور   شاید    اسکی    شدت   میں   اور  بھی    اضافہ   ھوجاے جسکی   خاص   وجہ    خطے   میں    تبدیل   ھونے    والی   صورتحال   ھے    دراصل   2014   کو   افغانستان   کا  میدان   پھر   سے    پرو    اسٹبلیشمنٹ    دھشتگرد  قوتوں   کیلیے  سجایا   جارھا    ھے  اور   اس   میدان    میں   تازہ دم   گھوڑے   دوڑانے   کیلیے   انہیں   پاکستان   سے    گھوڑوں   کی   نیی  کیپ    درکار    ھے   جوکہ    آنے   والے    پروجیکٹ   کیلیے   اس   تعداد   میں   فی الحال   دستیاب   نہیں اور   یہ   تب   ھی  میسر  آسکتا   ھے    جب   ملک   کی    مجموعی    فضا   کو    اتنا   زھر آلود   بنایا   جاسکے    جو   اس   قسم    کے    حیوانات   کے    شکار   کیلیے    مناسب   موسم   کا    کام    دے سکے   حالات    ایک   مرتبہ  پھر    نوازشریف  اور  شہباز  شریف   کی  حکومت  کے   خاتمے   سے    ایک   دوماہ    قبل   ھونے   والے   قتل   عام   کی  جانب  حرکت  کررھی  ھے    اور   اسی    ماحول   اور   فضا  سازی   کی   ابتدا    کیلیے  سو   سے  زیادہ   لوگوں   کے   قصاب  ملک  اسحاق   جیسوں    کی   رہایی    اور   جی  ایچ  کیو    والوں    کیساتھ    انکی    میٹینگیں  مسایل   کو   اس   جانب   لیجانے   کے    واضح   اشارے  دے  رھے   ھے  ،   البتہ    افغانستان    میں    پیشگی   تیاری   کے   علاوہ   بھی اس    سناریو   کو   کھیلنے  کی   خاص   ضرورت    کا    تعلق    بلوچستان   میں    موجود   صورتحال    سے   ھے   جس   میں    بلوچ   راے عامہ    کو   کسی   دوسری   جانب   منحرف   کرنے    کیلیے    ایسے   سناریو    کا    کھیلنا   موزوں   سمجھا جارھا   ھے ۔
بلوچستان   میں اس   سلسلے   کو   رونق    دلانے   کا   اھم   مقصد    اصل  بلوچ   قیادت   کو  اسکرین سے  غایب   کرنا   ھے    جیساکہ    انہوں   نے   صوبہ   خیبر پختوانخواہ    اور   افغانستان   میں   انجام   دیا  جہاں    مذہبی    انتہا   پسندی   کو     فروغ    دیتے   ھوے    ان   علاقوں    کی   سیاسی   کلچر   بدل کر   رکھ  دی   اور  سیاسی   قیادت   متعدل   لوگوں   سے    طالبان   کو   منتقل   ھوگیی   اب   اسی   نقشے   کو  بلوجستان   میں    اتارا   جارھا   ھے    جسکے   تحت   روشن  خیال   بلوچ    سیاسی   قیادت   کو   پس  پشت  ڈالنا   اور   جعلی  قیادت   کو   ابھارتے   ھوے   فرقہ  پرستی   پر   مبنی    لیڈر شپ    کی   تخلیق  اور   پروان  چھڑانا   مقصود   ھے  تاکہ    بلوچ   کاز    کو     بڑی    آسانی   سے    اغوا    یا  منحرف   کیا   جاسکے   اس    مقصد    کی   تکمیل    کیلیے   فرقہ   واریت   کا    ناکام    نسخہ     اور بلوچ    قبایل   کو     باھم    دست  و گریبان    کرانے   پر   عمل  کیا  جارھا   ھے  ،   فرقہ  واریت    کو  موثر   بنانے   اور   ھوا   دلانے   کیلیے    کویٹہ  اور  زھدان   کا   انتخاب    کیا  گیا  ھے   تاکہ   بلوچ   قوم     کو    دو  اطراف   سے   فرقہ   وارانہ   خبروں   کی  زد   میں   رکھتے   ھوے    انھیں    یہ    تلقین    اور   باور   کرایا   جاسکے   کہ    ان   لوگوں   کا    اصل   مسلہ    بلوچستان   کے   قومی   وسایل   اور   دولت   کو  غارت   اور   غضب   کرنے    والوں   کے   خلاف   جدوجہد    کرنا   نہیں    بلکہ    فرقے    کے   نام   پر ھونے   والے   کھیل   میں   شریک   ھوکر   منصوبے   میں    سرگرم     کردار   ادا   کرنا   ھے ،   اسی   طرز   پر    دوسری   جانب    لڑاو   اور   حکومت  کرو    والی    پالیسی    پر      عمل   کرتے  ھوے   بلوچ    قبایل   کو    آپس   کے    چپقلشوں    میں    الجھایا   جارھا   ھے    جسکی   بدولت    بلوچ   قوم    موجودہ   سیاست   اور   قیادت    دونوں     سے   دستبردار    اور   بیزار    ھوتے   ھوے    اپنے   موقف   سے    پیچھے     ہٹے   اور   سناریو   کے   نادیدہ   منصوبہ   سازوں   کے   ہاتھوں    مستقل    کھلونا   بھی   بن   جاے ،  اس   خطرناک   کھیل   میں   کوشش   کی   جارھی   ھے    کہ    نادیدہ   قوتوں   کے   ایجنڈے   کی    تکمیل   کی    صورت    میں    بلوچ   قیادت   روشن   فکر   اور اینٹی  اسٹبلیشمنٹ     لوگوں    سے   ھٹ   کر    مستونگ    اور    سریاب   میں    ایجنسیوں     کے    مدرسہ   نما   لیبارٹریوں    سے   جنم    لینے    اور   پروان   چڑھنے   والے    پرو   اسٹبلیشمنٹ    خونخوار    کیڑے  مکوڑوں   کو    منتقل   کیا   جاسکے  ، لیکن     اس    ساری   صورتحال   پر   گہری   نظر    رکھنے   والے    کویٹہ   اور   بلوچستان   کے   محب   وطن   عوام    ان   منصوبوں   پر   کام    کرنے  والے     پس   پردہ    عناصر    کو   بخوبی   پہچانتے   ھے  ،  ضرورت    اس   امر   کی  ھے   کہ   عوام   دانشمندی    کا    ثبوت    دیتے    ھوے     صبر   کا  دامن    ہاتھ    سے نا جانے    دے   اور   منصوبے   کا    ایندھن    بننے   سے    ھر   قیمت   پر    اجتناب    کیا    جاے ،  تاکہ   ناعاقبت  اندیش عناصر   کے  مکروہ  عزایم  خاک   میں    ملایا  جاسکے ۔
آخر   میں    رب   ذوالجلال  سے    دعا  ھے کہ   شہدا   کے   بلند   درجات  کو   بلند    اور   پسماندگان   کو   صبر   جلیل    عطا    فرماے   ظلم   پر  خاموش   رہنے   والوں    اور   ظلم    کرنے   والوں   کی   گرفت   جلد   فرماے

4 responses to this post.

  1. انٹرنیشنل کھلاڑیوں کی جانب آپکے مضمون نے اشارہ ھی نہیں ، کیا امریکہ اور انڈیا بھی اس کھیل میں شریک نہیں ، اور سعودی عرب کو کیوں فراموش کررھے ھے جو پاکستان کے ساتھ تعاون اور دوستی کے نام پر آج تک صرف اور صرف وھابیت کو بڑھانے کیلیے اپنے ریالوں کی ریل پہل مدرسہ بنانے پر صرف کررھی ھے ، اور ساری دہشتگردی انہی سعودی فنڈڈ مدرسوں سے ھی ملک میں پھیلی ھے ،

    جواب دیں

  2. Posted by kariem on اگست 1, 2011 at 4:43 صبح

    پچھلے دنوں بی بی سی کی سایٹ پر لیفٹیننٹ جنرل جاوید ضیاء کے خطاب کو نقل کیا گیا تھا جس میں اس مقالے کی منطق سے ھم آھنگ بیان میں جنرل صاحب نے فرمایا تھا ” بلوچ بھائیوں کی ناراضی کا ہمیں احساس ہے لیکن اگر ماضی میں کوئی غلطیاں ہوئی بھی ہیں تو اب وقت اور حالات کا تقاضا ہے کہ ان غلطیوں کا ازالہ کیا جائے اور اختلافات کو بالائے طاق رکھا جائے۔ قومیت اور زبان کی بنیاد پر اختلافات ہوسکتے ہیں لیکن مذہب کی بنیاد پر ہم میں کوئی اختلاف نہیں ہے اس لیے مذہب کی بنیاد ہمیں اتحاد و یکجہتی کا بھرپور مظاہرہ کرنے کی ضرورت ہے‘۔ “

    جواب دیں

  3. Posted by shujjad on اگست 2, 2011 at 1:42 صبح

    میری نظرمیں یہ سب ایجنسیوں کی گیم ھے یہ ھمیں لڑوانا چاھتے ھے دوسری اقوام سے ھمیں ھوشیار رھنا چاھئے ھم کو اپنی مفاداد کو سمجھنا چھاھئے ورنھ ھمیں اور بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑھیے گا ھمیں اپنی مفاداد کو صحیھ سے استعمال کرنا چاھئے اور ھم مے یح بصیرت ھونا چاھئے کح ھمیں کیا کرنا چاھئے

    جواب دیں

  4. Posted by DANISH on اگست 3, 2011 at 7:06 صبح

    کسی کو الزام دیتے وقت اپنے گریبان میں جھانک لینا چاھئے
    جوان مردی یہ ھے کہ اپنا بوجھ دوسرو پر نہ ڑالو
    اپنی مدد اپ کامیابی کا سب سے بڑا اصول ھے

    جواب دیں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: