رنگ حنا کی سرخی میں کویٹہ کی عید

کارگل   کے   محاذ    پر   شہید   ھونے   والے   میجر   محمد  علی   شہید    کے    نام     سے    کویٹہ    میں     منصوب     روڈ      آج     تین    خواتین     چند     بچے    اور    نماز    عید    ادا    کرنے   والے    چند    مرد    حضرات    کے    خون    سے    رنگین   ھوگیا  ۔   آج    صبح    سے    فضا    میں   ھیلی  کاپڑ   گشت    کررھے    تھے  ۔   دھماکے    کیلیے     سفید   رنگ     کی   پراڈو   گاڑی  استعمال    کی    گیی    جس    میں    تقریبآ    پچاس    کلوگرام    کا    بارود    بھرا    گیا    تھا  ،  دھماکا    اتنا    شدید    تھا    کہ     گاڑیوں    کے    پرخچے     تقریبآ    ایک    کیلومیٹر    کے    فاصلے    تک  مکانوں    کی    چھتوں    پر    پھیل    گیے    قریب    کھڑی   گاڑیوں    میں    آگ    لگ    گیی    اور  آس  پاس    کے    مکانوں    کی    دیواریں    اور   چھتیں    گرگیے   ،   کالے    دھوایں     کے    بادل  پورے    شہر    میں    دیکھایی    دیے   ۔   ابتک    گیارہ    افراد    کے    شہادت    کی    اطلاعات    موصول    ھویی    ھے   ۔   تمام    سیاسی    جماعتوں    کیجانب    سے    اس     وحشیانہ    واقعے    کی   مذمت    کی    گیی    اور    سات    دن    تک     سوگ    منانے    کا    اعلان    کیا  گیا    ھے ۔    اس     واقعے     سے    متعلق     مزید    تفصیلات    جمح    کی    جارھی    ییں  ۔  معصوم    خواتین   اور  بچوں    کے    خون    سے    ھولی    کھیل    کر   انسانیت    دشمن     عناصر   اس    ظن    باطل    میں    مبتلا    ھے    کہ    اسطرح    کے    بزدلانہ    اقدامات    انجام    دیکر    اس    بہادر    قوم    کے حوصلے     پست    کرسکے   گی    جوکہ    انکے    احمقانہ    سوچ    کی   عکاسی    کرتے    ھے  ،   جس    قوم    نے    اپنی    حیات    خون    کی    سرخی    سے    لکھی    ھوں  ،  بھلا   خون    کے  رنگ    سے   خوف    کیوں    کھاے   ۔   موت    اپنی    تمام    وحشت    کے    بجاے    شیرین    ھوکر    ھم    تک    پہنچتی   ھے  ،  تاریخ    میں    کتنے   ھی    سورماوں    نے    ھمیں    چت    کرنے    کی    کوشش    میں    اپنی   پوری   حیات    صرف    کرکے     نابود    بھی   ھوگیے    لیکن    یہ    قوم    ھر    روز    درخشان    سے    درخشان    تر   ھوتی    گیی  ،  جس    قوم     کے     فکر    کا    محور    اس    مقدس    ہستی     کے    گرد    گھومتی    ھو  ،  جہنوں    نے    اپنا    پورا    گھرانا    اصولوں    کیخاطر     قربان    کردیا   ،  اس    قوم    کو    قربانی    سے    کیا    ڈرانا  ،  حیدر    کے    یہ  شیر   دل    فرزند     ملت    کی    مصلحت    کیخاطر    اپنے    ذوالفقار    نیاموں    سے    نہیں    نکال    رھی    ییں    لیکن    جب    بھی    دشمن   کھل    کر    سامنے    آے    تو    مرحب     کیطرح    ڈھیر  ھوجاے   ۔  خوارج    کی    نسل    کے    سھڑے    ھوے    باقیات    رات    کی    تاریکی    میں    چھپ    کر    معصوموں    کے    خون    سے    ھولی    کھیل    کر    اپنی    مردانگیت    پر    مطمین    نہ  ھو  ، ھم    حوادث    کے    فرزند    ییں  ،  غیرت    اور    شجاعت    ھماری    رگوں     میں    دوڑتے    ییں  ۔   مشکلات    میں    صبر    اور    استقامت     ھمارے     اقدار   اور    ایمان    کا   اھم    جز   ییں ،  ھماری    تاریخ    اپنے   موقف    پر    سر کٹانے    اور    قربان    کرنے   سے   بھری    پڑی    ھے   ،  گذشتہ   ایک  صدی     سے    اس     قافلے    کا     راستہ    ھمیشہ    آگ    اور    خون    سے    سجایا    گیا   ھے ،   جس    سے   ھمیں    انس    اور    عادت    سی    ھوگیی   ھے   ۔  ایسی    قوم     کیلیے    دیونما     دشمن    ایک     حقیر    مکھی    سے    بڑھ    کر   کویی    حیثیت    نہیں    رکھتی ۔ اب    بھی    ھم    صبر    کا    دامن    تھامے    ھوے    ییں  ،   لیکن   کب   تک  ،    ایسا    نہ    ھو    کہ   حالات     قابو     سے    بایر    ھوجاے   اور     ھم   ملال    کرتے   رہ    جاے   ،  لہذا    وقت  اور   دانشمندی     کا    یہی    تقاضا    ھے     کہ    اس    شیطانی   اور   بزدلانہ    کھیل    کو  یہی   ختم    کیا   جاے    اور    ھمارا    مطالبہ    ییں    کہ    سیاسی    ادکاری   یا   دوکانداری    چمکانے    کے   بجاے     شہر    کے    سارے     موثر    فریق    مل    بیٹھ   کر    کسی    حل    پر    پہنچنے    کی    حتی الامکان     کوشش    کرے   ،   وگرنہ    مسلہ    لب   بام    پہنچ    چکا   ھے    اور    شہر    کبھی  بھی    خون    کے    حمام    کا    منظر    پیش    کر سکتا    ییں    جس    میں     تر   و  خشک    یکساں   طور   پر    بہہ   جانے  کا    خطرہ     موجود    ییں  ،   خدا    نخواستہ    حالات    اس    موڑ    پر   نہ     پہنچ    پاے  ،  جس   پر     لوگ    یہ    سوچنا    شروع    کردے    کہ   بازار    اور    گلی   کوچے    بھرے   پڑے    ییں ،  ھمیں   تو    ڈھونڈ    کر    نشانہ    بنایا    جاتا    ھے ۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: