خدا کسی کو نامرد دشمن یا دوست نہ دے

مستونگ   کے  قریب   زایرین   کی   بس   پر   آج   سہ  پہر   دو   پک اپوں   پر   سوار    آٹھ   سے   دس   دہشتگردوں   نے   شدید   فایرینگ   کرتے  ھوے   چھبیس   بیگناہ    افراد   کو    شہید  کردیا  ۔   حملہ   آوروں   کے   پاس    راکٹ  لانچر   اور   کلاشنکوفیں   تھیں ،  تمام    زایرین   کو   ایک   صف    میں    اکٹھا   کرکے   ان   پر    شدید   فایرینگ    کی    گیی     جس   سے   چھبیس   افراد   جام   شہادت   نوش   کرگیے   اور  چھ   سے  آٹھ   افراد    شدید  زخمی   ییں  ۔   زخمیوں   کو    کویٹہ   منتقل   کرنے   والی    ایمبولینس   پر    بھی   سریاب  کے  قریب    فایرینگ   کی    گیی   ۔  جبکہ    کویٹہ    سے    زخمیوں   اور   شہدا    کے   لواحقین   کی    گاڑی   پر   بھی   سریاب   کے    نواحی   علاقے   اختر آباد    میں   حملہ  کیا  گیا    جسکے   نتیجے   میں   ابتک    دو  افراد   کی   شہادت   اور    متعدد   افراد   کے    زخمی   ھونے    کی    اطلاعات   ییں ، خیال   کیا  جارھا    ھے   کہ   حملہ   آوروں    کو  حکومتی    ایجنسیوں    کی    مکمل    پشت   پناھی   حاصل    ییں  جسکی    وجہ   سے   حملہ   آور   با آسانی  کویٹہ  کی   جانب    فرار    ھونے    میں   کامیاب    ھوگیے ،  حملے   کے   تقریبآ    ایک   گھنٹے   بعد  ضلعی  انتظامیہ    جای   وقوع   پر    پہنچ    سکے ،  جای  وقوعہ   سے   لوگ    اپنی    مدد   آپ     کے   تحت   زخمیوں   کو    ہسپتال    منتقل    کررھے   ییں  ۔  ملک    اور    صوبے   کے    مختلف    سیاسی   جماعتوں   اور   رہنماوں    نے    اس  بزدلانہ   حملے    کی   شدید    مذمت   کی    اور   عوام     سے    پرامن   رہنے   کی    اپیل    کی    ھے     مجموعی    طور   پر    دونوں    واقعات    میں   ابتک    31    افراد   شہید   ھوچکے   ییں        

ھمیشہ   کیطرح    اس   واقعہ   کی   ذمہ   داری   بھی    لشکر  جھنگوی     نے    ایک    مقامی   نیوز  ایجنسی    کو   فون   کرکے    قبول    کرلی    لیکن   ھمیں    مکمل    اطمینان   ھونا   چاھیے   کہ   ھمارے   سلامتی    کے    ادارے    اس   ٹیلی فون   کال   کو   کبھی   بھی    ٹریس    کرنے   کی    زحمت   نہیں   کرینگے   ۔  بلوچستان   میں    صرف    نواب بگٹی    کے    ٹیلی فون     کال    ٹریس     ھوتے    تھے   جسکی    بنا    پر    انکے     ٹھکانے    کا    پتہ    چلایا    جاسکا   ۔    کسی    مجرم    کے    بارے    میں   بھلا    ھمارے    سلامتی    کے    ادارے    ایسی    زحمت    کیوں    اٹھاے  ؟

One response to this post.

  1. Posted by zara jan on ستمبر 21, 2011 at 7:23 صبح

    Sham on them who did these all they are really coward who can just kill the inocient people but now its the time to think about our own secutiry we have to take it in our own hand we should not allow any one to do these all thing with us even not the Govt of Pakistan we coperated alot with them but got nothing now its time to wake up its enough now

    جواب دیں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: